محققین کا کہنا ہے کہ عالمی شرحِ تولید میں ’حیرت انگیز‘ کمی کے اثرات سے نمٹنے کے لیے دنیا پوری طرح سے تیار نہیں ہے۔

بچوں کی پیدائش میں کمی کا مطلب یہ ہوگا کہ اس صدی کے اختتام تک ہر ملک کی آبادی میں کمی واقع ہو جائے گی اور 23 ممالک کی آبادی، جن میں سپین اور جاپان بھی شامل ہیں، سنہ 2100 تک آدھی رہ جائے گی۔

اس کے نتیجے میں عمر رسیدہ افراد کی تعداد میں بہت زیادہ اضافہ ہو گا اور بہت سے شہری 80 برس یا اس سے زیادہ عمر کے ہوں گے۔

ایسا کیوں؟

اس کا سبب عورتوں کی شرح تولید میں کمی ہے یعنی اب خواتین کم بچے جن رہی ہیں۔ اگر ایک عورت کے بچے جننے کی شرح 2.1 سے کم ہو جائے تو آبادی میں کمی واقع ہونے لگتی ہے۔

سنہ 1950 میں ایک عورت زندگی میں اوسطاً 4.7 بچوں کو جنم دیتی تھی۔

امریکہ میں یونیورسٹی آف واشنگٹن میں قائم انسٹی ٹیوٹ فار ہیلتھ میٹرِکس اینڈ ایویلویشن کے محققین کا کہنا ہے کہ سنہ 2017 میں یہ شرح کم ہو کر 2.4 رہ گئی تھی اور اس صدی کے اختتام تک یہ مزید کم ہو کر 1.7 رہ جائے گی۔

محققین کے اندازے کے مطابق 2064 تک عالمی آبادی 9.7 ارب تک پہنچنے کے بعد گرنا شروع ہو جائے گی اور 2100 میں 8.8 ارب پر آ جائے گی۔ محقق پروفیسر کرِسٹوفر مرے نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’پوری دنیا میں قدرتی طور پر آبادی میں کمی بڑی بات ہے۔

’اسے سمجھنا اور ماننا ایک مشکل کام ہے، یہ بہت غیر معمولی بات ہے، ہمیں اپنے معاشروں کو بدلنا ہوگا۔‘

شرح تولید میں کمی کا سبب

اس کا تعلق مردوں میں سپرم یا نطفوں کی کمی سے نہیں ہے۔ بلکہ اس کا سبب خواتین کا تعلیم یافتہ ہونا اور ملازمت اختیار کرنا ہے۔ اس کے علاوہ مانع حمل طریقوں نے بھی عورتوں کو کم بچے جننے کے انتخاب کی سہولت فراہم کی ہے۔ شرح تولید میں کمی کئی لحاظ سے ایک کامیابی ہے۔

کونسے ممالک زیادہ متاثر ہوں گے؟

جاپان کی آبادی سنہ 2017 میں اپنے نقطۂ عروج پر 128 ملین تک پہچنی تھی جو اس صدی کے اختتام تک صرف 53 ملین رہ جائے گی۔ اسی عرصے کے دوران اٹلی کی آبادی 61 ملین سے کم ہو کر 28 ملین رہ جائے گی۔

اسی طرح 23 ملکوں کی آبادی، جن میں سپین، پرتگال، تھائی لینڈ اور جنوبی کوریا شامل ہیں، آدھی رہ جائے گی۔

پروفیسر مرے نے اسے ’حیرت انگیز‘ قرار دیا ہے۔

دنیا میں سب سے زیادہ آبادی والے ملک چین کی آبادی اگلے چار برس میں نقطۂ عروج پر پہنچ کر 1.4 ارب ہو جائے گی جو 2100 تک گر کر 732 ملین رہ جائے گی۔ اس کی جگہ انڈیا لے لے گا۔

یہ یقیناً ایک عالمی مسئلہ بن کر سامنے آئے گا جہاں 195 ملکوں میں سے 183 ملکوں کی شرح تولید میں کمی واقع ہو گی۔

یہ مسئلہ کیوں ہے؟

شاید کچھ لوگ سوچیں کہ یہ ماحول کے لیے اچھا ہے۔ آبادی کم ہوگی تو کاربن ڈائی آکسائڈ کے اخراج میں کمی ہوگی اور زراعت کے لیے جنگلات کی کٹائی میں کمی واقع ہوگی۔

پروفیسرے مرے کہتے: ’یہ بات درست ہے سوائے اس کے جوان کم اور بوڑھے زیادہ ہو جائیں گے اور اس کے اپنے منفی اثرات ہوں گے۔‘

تحقیق میں لگائے گئے اندازوں کے مطابق سنہ 2017 میں پانچ برس سے کم عمر بچوں کی تعداد 681 ملین کے مقابلے میں 2100 میں 401 ملین ہو جائے گی۔

جبکہ 80 سال عمر کے افراد کی تعداد سنہ 2017 میں 141 ملین کے مقابلے میں سنہ 2100 میں 866 ملین ہو جائے گی۔

سوال یہ ہے کہ معمر افراد کی دنیا میں ٹیکس کون دے گا؟ ان افراد کی دیکھ بھال کے اخراجات کون اٹھائے گا؟ ان کی دیکھ بھال کون کرے گا؟ کیا بڑی عمر کو پہنچ کر لوگ ریٹائر بھی ہو سکیں گے؟

کیا اس کا کوئی حل بھی ہے؟

برطانیہ جیسے ملکوں نے اپنی آبادی میں اضافے اور شرح تولید کی کمی پوری کرنے کے لیے تارکین وطن کا سہارا لیا ہے۔ مگر یہ حل دیرپا نہیں کیونکہ جب ہر جگہ ہی عمر رسیدہ افراد کی تعداد بڑھے گی تو جوان کہاں سے آئیں گے۔

پروفیسر مرے کہتے ہیں کہ اس طرح سرحد کھولنے یا نہ کھولنے کا اختیار ختم ہو جائے گا اور یہ ممالک تارکین وطن کو اپنے طرف راغب کرنے کے لیے مسابقت کریں گے۔

بعض ملکوں نے زچگی تعطیلات میں اضافے، بچوں کی مفت نگہداشت، مالی ترغیبات اور ملازمین کو اضافی حقوق دینے کی پالیسیاں متعارف کروائی ہیں مگر مسئلے کا کوئی ایک واضح حل نہیں ہے۔

سویڈن اپنی شرح تولید کو 1.7 سے 1.9 کرنے میں کامیاب رہا، مگر کئی دوسرے ممالک بچوں کی کمی کے مسئلے کو حل کرنے میں خاطر خواہ کامیابی حاصل نہیں کر سکے ہیں۔ سنگارپور میں شرح تولید اب بھی 1.3 ہے۔

ماہرین نے خواتین کی تعلیم اور مانع حمل طریقوں کے سلسلے میں ہونے والی پیشرفت کو ختم کرنے کے بارے میں خبردار کیا ہے۔

پروفیسر ایمِل وولسیٹ کا کہنا ہے کہ آبادی میں کمی بہت سے ملکوں کے لیے سب سے بڑا مسئلہ بن کر ابھرے گی مگر اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ خواتین کی تولیدی صحت اور ان کے حقوق کے سلسلے میں ہونے والی پیشرفت پر کوئی سمجھوتہ کیا جائے۔

تولیدی شرح کے لیے 2.1 کی حد کیوں؟

بہت سے لوگ سوچیں گے کے دو والدین کے دو بچے ہوں تو آبادی کی موجودہ سطح برقرار رکھنے کے لیے کافی ہے۔

مگر صحت کی بہترین سہولیات کے باوجود تمام بچے جوانی کو نہیں پہنچ پاتے۔ پھر لڑکیوں کے مقابلے میں لڑکوں کی پیدائش کی شرح قدرے زیادہ ہوتی ہے۔ اس لیے ترقی یافتہ ممالک میں آبادی کی درست شرح مبادلہ 2.1 سمجھی جاتی ہے۔

پھر جن ملکوں میں بچوں میں شرح اموات زیادہ ہے وہاں بھی اضافی شرح تولید کی ضرورت ہے۔

ماہرین کیا کہتے ہیں؟

یونیورسٹی کالج لندن کے پروفیسر ابراہیم ابوبکر کہتے ہیں کہ ’اگر یہ اندازے آدھے بھی صحیح ہیں تو تارکین وطن کی ضرورت ہر ملک کو پڑے گی۔

’اس میں کامیابی کے لیے نئی عالمی سیاسی سوچ اپنانا ہوگی۔‘