برطانیہ کے شاہی خاندان اور وزیرِ اعظم کے زیرِ استعمال طیارے آر اے ایف وائیجر پر نو لاکھ پاؤنڈ کی رقم سے رنگ و روغن کا کام مکمل کر لیا گیا ہے۔

وزیرِ اعظم کے دفتر ڈاؤننگ سٹریٹ کا کہنا ہے کہ پہلے خاکستری رنگت کے حامل اس طیارے کو برطانیہ کے پرچم کے رنگوں سے رنگنے کا مقصد بیرونِ ملک برطانیہ کی ’بہتر نمائندگی‘ ہے۔

یہ کام مارشل ایروسپیس اینڈ ڈیفینس گروپ نے انجام دیا ہے جنھوں نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ طیارہ ان معمول کے طیاروں سے کہیں بڑا تھا جن پر وہ عموماً کام کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

کیا ایک ’اسرائیلی طیارہ‘ پاکستان آیا تھا؟

امریکی فضائیہ کا ’خلائی طیارہ‘ خفیہ مشن پر روانہ

فلوریڈا: لینڈنگ کے دوران طیارہ دریا میں جا گرا

سکاٹش نیشنل پارٹی، لیبر، اور لبرل ڈیموکریٹس نے اس کام پر اٹھنے والے اخراجات کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔

آر اے ایف وائیجر ایک ایئربس اے 330 جیٹ طیارہ ہے جسے 2015 میں ایک کروڑ پاؤنڈ کی رقم سے برطانوی حکومت کے استعمال کے قابل بنایا گیا تھا۔

اسے سب سے پہلے جولائی 2016 میں سابق وزیرِ اعظم ڈیوڈ کیمرون اور دیگر وزرا کو نیٹو سربراہی اجلاس میں لے جانے کے لیے استعمال کیا گیا تھا۔

اس وقت برطانوی حکومت نے ان اخراجات کا دفاع کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ پروازیں چارٹر کروانے سے بہتر ہے اور دعویٰ کیا تھا کہ اس سے سالانہ سات لاکھ 78 ہزار پاؤنڈز کی بچت ہوگی۔

تصاویر کے حقوق محفوظ ہیں